1. Home
  2. اخبار

Tag: اخبار

عجیب لوگ تھے وہ تتلیاں بناتے تھےسمندروں  کے  لیے سیپیاں بناتے تھےوہی  بناتے  تھے  لوہے  کو  توڑ  کر  تالاپھر اس کے بعد وہی چابیاں بناتے تھےمیرے قبیلے میں تعلیم کا رواج نہ تھامرے   بزرگ   مگر  تختیاں  بناتے  تھےفضول وقت میں وہ سارے شیشہ گر مل کرسہاگنوں    کے    لیے   چوڑیاں    بناتے   تھےہمارے گاؤں میں دو  چار  ہندو  درزی  تھےنمازیوں    کے    لیے    ٹوپیاں   بناتے    تھےلیاقت جعفری

Read More

سوات بحرین میں سیلابی ریلا  پانی کے بہاو میں خطر ناک حد تک اضافہ دو گھنٹے پہلی کی و ڈیو

Read More

وہ میری عادت ہے میری قاری ہے میری ساتھی ہے میں رخصت کرتے ہوئے اور بعد میں کیا محسوس کروں گا احساس بہت تکلیف دہ ہےتحریر ۔ساجد آمان ۔                   میری بیٹی کی رخصتی 30 اپریل 2023 کو طے ہے، یوں #شادی کی تقریبات یکم مئی کو مکمل ہوں گی یوں معاشرتی معنوں میں یہ ایک خوشی کی بات ہے مگر میں دل گرفتگی میں ہوں ہانیہ ساجد امان کی پیدائش تب ہوئی تھی جب ہماری رہائش لاہور میں تھی۔ بہت اچھے محل وقوع اور بہترین پڑوس میں رہتے ہوئے بھی آپ مادر وطن میں نہیں ہوتے تو دوسرے درجے کے شہری بحر حال ہوتے ہیں خوا آپ کتنے ہی باوقار اور با اعتماد محسوس کرے آپ پٹھانوں کے گھر کے نام سے پکارے اور جانے جاتے ہیں۔ یہ عجیب قسم کا امتیاز ہر جگہ ہوتا ہے ہم بھی سات پشتوں تک کسی کو گرین کارڈ نہیں دیتے پنجابی ، کشمیری پہچان اور تاریخ کے ساتھ ضرور لگاتے ہیں۔ اس سے بڑھ کر انسانی خصوصیات و خصلت سے بڑھ کر اس کی نسل میں زیادہ دلچسپی لیتے ہیں۔ کتوں،بلیوں، گائے ، بھینسوں میں بھی ہمارا طرز ایسا رہتا ہے جو شاید با معنی بھی ہے مگر انسانی نسل میں ذیلی نسل پر اصرار مجھے اپنی آنا کی تسکین ہی لگتا ہے۔ لاہور میں رہتے ہوئے تین چوتھائی پاکستان میری سلطنت تھا جس کے دورے میری مزدوری تھی اور اسی سے کمائی تھی کشمیر، گلگلت بلتستان ، خیبرپختونخواہ ، بالائی پنجاب ، وسطی پنجاب ، جنوبی پنجاب میں کوٹ سبزل تک پنجاب و سندھ کا آخری قصبہ میرے رحم کرم پر دیکر مجھے قابل رحم کیا گیا تھا یوں میں گھر میں گندے کپڑے دھلوانے و استری کروا کر بھاگ نکلنے تک ممبر تھا میری بچی مانوسیت کے حد تک میرے ساتھ تب پہنچی جب میں نے دیکھا کہ بہت چھوٹی ہے میں گھر سے گاڑی نکال رہا ہوں وہ ماں کی گود میں ہے اور میری طرف لپک رہی ہے اس دن گاڑی نکال کر سیاہ تارکول پر دوڑتے ہوئے اپنی بے بسی اور گویا غلامی پر بہت رنجیدہ تھا۔ 2009 میں جب مجھے کراچی جانا پڑا تو فیملی کراچی لے جانا شاید ممکن نہیں تھا کراچی ٹارگٹڈ کلنگ اور نسلی فساد کے بد ترین آگ میں جل رہا ، شمالی پاکستان فرقہ واریت اور عسکریت پسندی کی شدید لپیٹ میں تھا اگر عملی طور زندگی کہیں پر سکون تھی وہ پنجاب میں تھا ، جہاں میرا خاندان سماجی تنہائی کے احساس میں دہرا ہو رہا تھا اور کوئی ٹھوس وجہ نہیں تھی کہ رہائش لاہور میں ہی رکھی جائے۔ سوات شفٹ ہونے کے بعد میں پاکستان کے ایک آخری کنارے اور خاندن دوسرے آخری کنارے پر تقسیم ہوگیے۔ ایک خلیج نا قابل برداشت و عبور حائل ہوگیا ۔ پیشہ ورانہ زندگی کی یاداشتوں پر مبنی الگ سے ایک تفصیلی بحث لکھنے کا پروگرام ہے جس کے کئی نوٹس اور یاداشتوں پر مبنی صفحات پہلے ہی لکھ چکا ہوں یقیناً پیشہ ورانہ زندگی سے تعلق رکھنے والوں کی رہنمائی اگر نہیں ہوگی محضوظ ضرور ہونگے باس یا افسر کا انتخاب آپ نہیں کرتے مگر ایک آئیڈیل باس کی امید ہر کوئی کرتا ہے پیشہ ورانہ زندگی میں مختلف افسران کے نیچے کام کرنے کا موقع ملا جن میں انتہائی ایماندار ، صاف گو اور راست باز لوگ بھی رہے اور ایسے بھی رہے جن کو غصے کے علاؤہ کچھ نہیں آتا تھا۔ ایسے مصنوعی دانشور بھی دیکھے جو گوگل کرکے دھاک بٹھانے میں ماہر اور کینہ پروری میں یکتا تھے۔ ایسے بھی جو احساس کمتری کے مارے مسخروں کی طرح اشارے کرتے اور جبر کرتے کہ ان کا احترام کیا جائے۔ ہو حلقہ یاراں تو بریشم کی طرح نرم کے مصداقمالک کے سامنے اپنے وجود کی نفی کرنے والے ، زاہد و عابد بن جانے والے اور چمچے مسکے لگا کر نوکری پکی کرنے والے اور زیردست لوگوں کے لیے آسمان ہمیشہ نیچے رکھنے والے بھی قریب سے دیکھے پیشہ ورانہ زندگی میں سختی اور تندی ملازمت کا بحرحال تقاضا ہوتا ہے میں جب بھی اپنے خاندان سے ملا اپنی بیٹی سے جدا ہونا پھر سب سے مشکل رہا مجھے احساس ہی نہیں ہوا کب اس نے بولنا شروع کیا چھوٹی چھوٹی باتیں مگر پہلا لفظ اس کا پاپا ہی تھا جو اس نے پہلا مکمل ادا کیا تھا 2016 میں مجھے کمر کی تکلیف شروع ہوئی تو کئی دفعہ مجھے بیڈ ریسٹ کا مشورہ ملا ۔ تکلیف میں عجیب سا سکون ملتا میری بیٹی دیوانگی کی حد تک مجھ سے منسلک رہی اور میری تکلیف ختم ہوکر پھر کام پر طویل جدائی میں نکلتا تو اس کے لیے دعا مشکل رہتی کہ میری بیماری طویل ہو کہ میں گھر پہ رہوں یا میری تکلیف ختم ہوئی پھر کھبی نہ آئے اگر کسی کو میرا میری بیٹی کے ساتھ رقابت کا عجیب سے جزبہ ہوتا وہ میری بیوی کا ہوتا وہ کہتی نہ نہ لڑکی ہے اس کی ہر خواہش کے آگے سرنگوں ہونا ایک دن ضرور رولائے گا۔ لڑکی ہے لڑکا نہیں ۔ اور مجھے احساس محرومی آ پکڑتی میری بیوی نے میرا بہت ساتھ دیا آدھی محبت آدھی خاندانی دلچسپی نے ملکر میری شادی ممکن کی اس نے بہادری اور جوان مردی سے میری زندگی میں سہولت دی۔ رونا دھونا اور شکوہ شکایت سے آگے مجھے خبر نہ ہونے دی بچوں کے سکول ، ڈاکٹر ، کپٹروں کے فکر کروں لاہور جیسے دیار غیر میں بھی کم از کم یہ فکر کھبی رکاوٹ نہیں بنی میں چار بچوں کے ساتھ پانچواں بچہ بن کر پلتا رہا ہوں 2018 کے مارچ میں جب مجھے بیماری کے سبب ملازمت چھوڑنی پڑی رہی تھی میری بیٹی بہت خوش تھی جبکہ میری بیوی مستقبل کی بے یقینی کا ذکر کرتی اور کہتی کروگے تو کیا اس کا جواب میرے پاس بھی نہیں تھا میں جو 1992 سے ایک نئی شناخت کے ساتھ 1997 میں شادی کے 2000 میں عملی طور پر شہر چھوڑ چکا تھا اور اٹھارہ انیس سالوں میں شہر مجھے بھول چکا تھا میری شناخت ایک اجنبی کی سی تھی جس کو رشتہ دار اور کچھ قریبی جاننے والے بھلا نہیں پائے تھے۔ میرے لہجے پر وقت کے نشان تھے اور صورت بھی مسافت میں ڈھل چکی تھی اپریل 2018 کے بعد ایک نئی اور مختلف زندگی شروع کرتے وقت ہر دفعہ مایوسی اور بے یقینی نے استقبال کیا 2018 میں شروع کرنے والے کاروبار پر اگلے ہی سال فروری کے آخر میں کرونا وبا نے ترقی کے دروازے بند کر دئے جو ابھی پورا ایک بھی نہیں گزار سکا تھا اور ابھی ابتدائی جدوجہد میں تھا میں نے تمام افشنز ختم کر رکھے تھے کہ میں دوبارہ ملازمت شروع کروں یا کاروبار کی نوعیت بدل دوں جس کی مشورہ ہر طرف سے مل رہا تھا مگر میں ایک طویل عرصہ جدائی اور بغیر شناخت کے رہ کر حوصلہ نہیں کر پا رہا تھا معیار زندگی آمدن کی کمی کے ساتھ پہلے ہی دن بہ دن خراب ہو رہا تھا اور اس کا اثر پورے خاندان کے اعتماد پر پڑ رہا تھا مگر میری بیٹی مجھے حوصلے دیتی اور کہتی شروع میں ایسے ہی ہوتا ہے ہمارے پاس سب کچھ اور سب سے بڑھ کر اپ۔ میں اس کی خواہش ساتھ رہنے کی تمنا سمجھتے ہوئے اس سے خود کو مطمعن کرتا میری خواہش تھی کہ وہ پڑھے اور جتنا پڑھ سکے پڑھ پائے وہ پوچھتی پاپا اگر مجھے ملک سے باہر جانا پڑ جائے تعلیم کے لیے تو آپ کیا محسوس کریں گے میں کہتا بہت ہی غرور و فخر اور وہ بہت خوش ہوتی افسوس وہ صرف میٹرک تک پہنچ پائی میں ہار گیا کہ اس کا رشتہ کروں سب کی یہی خواہش تھی اور دنیا کی سب سے مختلف بیٹی جس سے ہر بات کرنے اور سننے کی طاقت رکھتا تھا شاید اس رشتے پر کوئی بات نہ کر سکا کیونکہ شادی کی بات بلکہ موضوع پر بپھر جانی والی اس رشتے کے ہونے کی متمنی لگ رہی تھی مجھے الفاظ سننے کی ضرورت نہیں تھی میں رویہ پڑھ رہا تھا میری بیوی جس سے ہر جنم ہر بار شادی کرنے کو ترجیح دونگا اور واحد ترجیح رہے گی بھی کھل کے نہیں کہہ رہی تھی مگر مجھے رشتے کی مخالفت سے روک رہی تھی میرا داماد میری بہین کا بیٹا میری پھوپھی کا پوتا میرے سامنے ہے جو ہمیشہ ہی مجھے اتنا عزیز رہا انجینرنگ کرکے ابھی فارغ ہوا ہے وہ کئی بہنوں کا اکلوتا بھائی اؤر میری بیٹی تین بھائیوں کی اکلوتی بہن معلوم نہیں معاشرتی طور پر یہ بہت خوشی کی بات ہے اور میں خوش ہوں سب بہت خوش ہیں مگر بیٹی کی جدائی کا درد ہر خوشی پر غالب ہے معلوم نہیں یہ پیار ہے انسیت ہے یا خود غرضی کہ میری بیٹی ہوتے ہوئے بھی وہ مجھے اس کے بیٹے کی طرح سلوک کرتی رہی ہے۔ میرے آنے کا انتظار ، میرے کھانے کی فکر ، میرے سونے جاگنے کے خیال ۔ میری طبیعت اور موڈ کی بخوبی واقفیتایسا شاید سلوک میں کھبی نہ پا سکوںہر لمحے ایک آواز اور اس پر اگلے ہی لمحے دلفریب خوشگوار مسکراہٹ کے ساتھ موجودگی اور کسی بھی فرمائش پر بغیر کسی ماتھے پر شکن کے فورآ سے پیشتر عمل پچھلے سال کی تحریر

یہ محض ایک تصویر نہیں ۔۔۔ اس تصویر میں میری کہانی ہے جس کے لکھنے کی ہمت میں کر نہیں پا رہا ہوں ۔۔

Read More

کاروباری مقابلہ یابزنس کمپٹیشن ایک جائزہ

موجودہ دور میں بھی سب ٹھیک ہو جائیگا اگر آپ ان تجاویز پہ عمل کر لیں تو ! کاروباری اداروں میں ایسا مقابلہ، جس میں دو یا اس سے زیادہ ادارے بیک وقت ایک ہی

Read More