نہاری ایک خوش ذائقہ پکوان تاریخ دانوں کے مطابق ، 17 ویں صدی میں ، شاہ جہاں کو دہلی میں اپنا دارالحکومت قائم کرنے کے فورا بعد ہی بہت سی مشکلات کا سامنا کرنا پڑا ان میں سے ایک بڑی تعداد میں پھیلا ہوا فلو بھی تھا اس زمانے میں سردی بھی بہت عروج پر تھی اور شاہجہان اپنی فوج کو اس فلو اور سردی سے بچانے کے لیے سوچنے لگا اس کے بعد ہی شاہی خانسامہ اور(شاہی حکیم) نے مصالحے سے بھرے ایک مضبوط اسٹائو تیار کرنے کے لئے اپنے ہاتھ جوڑ لئے جو جسم کو گرم اور مضبوط بنائے گا۔ لہذا ،اس طرح نہاری کی ابتدا ہوئی اور دہلی میں تو نہاری کی دھوم آج تک ہے جس میں کریم کا نام سر فہرست ہے مجھے وہاں جا کر نہاری کھانے کا شرف حاصل ہو چکا ہے وہاں بیٹھے ایک استاد کے مطابق یہ ان کی ساتویں نسل ہے جو نہاری کے ذائقہ کو برقرار رکھے ہوئے ہیں ان کے رشتہ دار لاہور میں بھی ہیںلفظ “نہار” عربی زبان سے شروع ہوا ، “نہار” جس کا مطلب ہے “صبح”۔ یہ اصل میں نوابوں نے مغل سلطنت میں صبح کی نماز کے بعد ناشتے کے طور پر کھایا تھا۔ یہ بعد میں اپنی توانائی بڑھانے کی خصوصیات کی وجہ سے محنت کش طبقے کے لئے ناشتے کا باقاعدہ ڈش بن گیا نہاری کے ساتھ کسی قسم کی روٹیاں بنائی جاتی تھی جن میں سب سے مشہور دودھ والی روٹی ہےقیام پاکستان کے وقت لاہور اور کراچی میں دہلی سے بہت عمدہ دہلی کے پکوان بنانے والے آئےلاہور میں تو صرف سوداگران دہلی والوں کے لیے دہلی کے خانسامے مختص ہوا کرتے تھے اس دور میں کشمیر سے واضوان بھی آئے یعنی ماسٹر شیف مگر افسوس وہ لاہور میں چل نہ سکےلاہور میں استاد سمیع باورچی ، شیوفو بھائی ، استاد دبیر دلی پکوان بنانے میں بہت مقبول تھے حاجی نہاری ملک نہاری وارث نہاری شاھد نہاری محمدی نہاری یہ سب بعد کے ذائقے ہیں لاہور کی سوداگران برادری کی شادیوں کی تاریخ کا تعین باورچی کی تاریخوں کے مطابق رکھا جاتا تھا مجھے کئ سالوں پہلے سوداگران کی شادی اٹینڈ کرنے کا موقع ملا جو ساڑھی کا کاروبار کرتے ہیں کیا عمدہ اسیٹو اور طرح طرح کے کھانے روغنِ جوش کا نام لکھتے ہی منہ میں پانی آ چکا ہےکسی زمانے میں چاچا مہر بسا کے ہوٹل نعمت کدہ کے ایک شیف سے بہترین کھانے پکوانے کا شرف بھی رہا ہے جو دہلی والوں کے ہاں ملازم تھے اب تو لاھور میں ذائقہ ختم ہوتا جا رہا ہے مصالحہ کی بھرمار نے اصل ذائقہ چھین لیا ہے اور رنگ برنگے باورچیوں نے لاہوریوں سے خوش خوراکی چھین لی چند ایک باورچی جو پرانے کام کرتے چلے آرہے ہیں بہت ہی محدود پیمانے پر اعلی کوالٹی کے کھانے تیار کر کے دیتے ہیں میں کوشش کر رہا ہوں کہ ایسے استادوں کی حوصلہ افزائی کر سکوں جو سوشل میڈیا سے دور ہیں اور یہی ان کے لئے اچھا ہے ۔۔۔یاد رکھیں نہاری کے لئے بونگ اور بہترین مچھلی کا گوشت ہی سے بہترین ذائقہ بن سکتا ہے مگر افسوس بہت ہی مشہور دکانوں پر لال بوٹی کے گوشت میں نہاری بک رہی ہے اور لوگ مزے سے کھا رہے ہیں نا کبھی کسی نے یہ پوچھنا گوارا کیا کہ مچھلی کا گوشت ہے کہ نہیں افسوس ۔۔۔منقول۔۔۔

Read Previous

غزہ کے جنوب میں رفح پر اسرائیلی بمباری کے بعد کا اندوہناک منظر (آرکائیوز – رائٹرز)رفح پر حملہ کرنے سے پہلے شہری انخلاء کی کارروائیوں میں ہفتے لگیں گے : اسرائیلی ذریعہغزہاسرائیلی نشریاتی ادارے نے پیر کے روز ایک فوجی ذریعے کے حوالے سے بتایا کہ ماہ رمضان کی آمد سے غزہ کی پٹی میں جاری جنگ پر کوئی اثر نہیں پڑے گا، باوجود اس کے کہ جنگ بندی کے معاہدے تک پہنچنے کی کوشش کی گئی ہے۔”انخلاء میں ہفتے لگیں گے۔”ذرائع نے مزید کہا کہ ممکنہ زمینی کارروائی کی تیاری کے لیے رفح کے علاقے سے مکینوں کو نکالنے کے عمل میں چند ہفتے لگیں گے۔ واضح رہے کہ حماس “رفح پر زمینی حملے کو روکنے کے لیے اپنی بہترین کوششیں کر رہی ہے۔”ذرائع نے یہ بھی کہا کہ اسرائیل میں سیکیورٹی سروسز کا خیال ہے کہ حماس کے رہنما یحییٰ سنوار “مسجد اقصیٰ کے گرد تناؤ کا فائدہ اٹھاتے ہوئے رمضان کے مہینے کو مذہبی جنگ میں تبدیل کرنا چاہتے ہیں۔””انروا کو تحلیل کرنا حماس کے خاتمے میں معاون ہے۔”اتھارٹی نے ذرائع کے حوالے سے یہ بھی کہا کہ اسرائیلی سیکیورٹی سروسز کا خیال ہے کہ فلسطینی پناہ گزینوں کے لیے اقوام متحدہ کی ریلیف اینڈ ورکس ایجنسی (انروا) کو تحلیل کرنے اور اس کا متبادل تلاش کرنے سے غزہ کی پٹی میں حماس کی اتھارٹی کو ختم کرنے میں مدد ملے گی۔ اس بات پر زور دیتے ہوئے کہ ایجنسی کے خلاف میڈیا اور سفارتی جنگ جاری رکھنا اہم ہے۔”مغربی کنارے میں کوآرڈینیشن”اسی دوران، اسرائیلی سیکیورٹی ذرائع نے کہا کہ مغربی کنارے میں فلسطینی سکیورٹی سروسز کے ساتھ سیکیورٹی کوآرڈینیشن اچھی طرح سے جاری ہے، اور یہ کہ اتھارٹی مغربی کنارے میں معاشی بحران سے گزرنے کے باوجود استحکام برقرار رکھنے کے لیے ہر ممکن کوشش کر رہی ہے۔ذریعے نے نشاندہی کی کہ اسرائیلی حکام جنگ کے آغاز سے ہی غزہ کی پٹی میں مقامی فورسز کی شناخت کے لیے کام کر رہے ہیں، تاہم، اسے حماس کے بجائے حکومت کی باگ ڈور سنبھالنے کے قابل کوئی ممکنہ مقامی قوت نہیں ملی۔رفح میں زمینی کارروائی کرنے کی یہ اسرائیلی تیاریاں غزہ کی پٹی کی 2.3 ملین آبادی کے نصف کے جنوبی شہر رفح میں جمع ہونے کے درمیان سامنے آئی ہیں، جہاں ان میں سے بہت سے لوگ خیموں میں رہتے ہیں اور انہیں خوراک کی شدید قلت کا سامنا ہے۔غزہ کے شہریوں کے لیے رمضان شدید بھوک، مسلسل نقل مکانی، خوف اور اضطراب کے ساتھ ساتھ، رفح پر فوجی آپریشن کے خطرات کے درمیان آیا ہے۔کل، اتوار، اقوام متحدہ کی ریلیف اینڈ ورکس ایجنسی برائے فلسطینی پناہ گزینوں نے اس بات کا اعادہ کیا کہ محصور فلسطینی پٹی میں ہر جگہ بھوک ہے، اس بات کی نشاندہی کرتے ہوئے کہ شمالی غزہ کی صورت حال افسوسناک ہے، کیونکہ بار بار اپیل کرنے کے باوجود زمینی امداد روک دی جاتی ہے۔

Read Next

راولپنڈی میں یکے بعد دیگرے 4گیس لیکیج دھماکوں میں 2 کمسن بہن بھائی جاں بحق اور تین خواتین سمیت 11 افراد جھلس کر زخمی ہو گئے۔راولپنڈی کے مختلف علاقوں میں چند گھنٹوں کےدوران گیس لیکیج کے باعث چار دھماکے  ہوئے، بھابڑا بازار میں گھر میں گیس لیکج دھماکے سے 8 ماہ کا کمسن بچہ ارحم اور ساڑھے 3 سال کی آیت فاطمہ موقع پر جاں بحق ہوگئے جبکہ بچوں کی ماں جھلس کر زخمی ہوگئیں۔دوسرا واقعہ آریہ محلہ میں پیش آیا جہاں گیس لیکیج دھماکے سے دو خواتین سمیت پانچ افراد جھلس کر زخمی ہوگئے۔تیسرے واقعہ میں ٹنچ بھاٹہ میں دو کم عمر بچے جھلس کر زخمی ہوگئے۔گیس لیکیج کا چوتھا واقعہ گرجاروڈپر قریشی آبادمیں پیش آیا ، دھماکے سے 3افراد جھلس کر زخمی ہو گئے، زخمیوں میں 2 بچے اور ایک خاتون شامل ہیں۔ریسکیو حکام کے مطابق چاروں دھماکے گیس لیکیج کے بعد بجلی کا سوئچ آن کرنے یا لائیٹر ماچس جلانے کے باعث پیش آئے۔ریسکیو حکام کا کہنا ہے کہ سحری کے اوقات میں گیس لوڈ شیڈنگ اور شہریوں کی غفلت حادثات کا شکار بن رہی ہے، شہریوں نے دھماکوں اور ان کے نتیجے میں جانی و مالی نقصان کا ذمہ دار سوئی گیس حکام کو ٹھہرایا ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *